• Web
  • Humsa
  • Videos
  • Forum
  • Q2A
rabia shakeel : meri dua hai K is bar imran khan app is mulk k hukmaran hun To: suman(sialkot) 5 years ago
maqsood : hi how r u. To: hamza(lahore) 5 years ago
alisyed : hi frinds 5 years ago
nasir : hi To: wajahat(karachi) 5 years ago
khadam hussain : aslamoalikum pakistan zinsabad To: facebook friends(all pakistan) 5 years ago
Asif Ali : Asalaam O Aliakum . To: Khurshed Ahmed(Kashmore) 5 years ago
khurshedahmed : are you fine To: afaque(kashmore) 5 years ago
mannan : i love all To: nain(arifwala) 5 years ago
Ubaid Raza : kya haal hai janab. To: Raza(Wah) 5 years ago
qaisa manzoor : jnab AoA to all 5 years ago
Atif : Pakistan Zinda bad To: Shehnaz(BAHAWALPUR) 5 years ago
khalid : kia website hai jahan per sab kuch To: sidra(wazraabad) 5 years ago
ALISHBA TAJ : ASSALAM O ELIKUM To: RUKIYA KHALA(JHUDO) 5 years ago
Waqas Hashmi : Hi Its Me Waqas Hashmi F4m Matli This Website Is Owsome And Kois Shak Nahi Humsa Jaise Koi Nahi To: Mansoor Baloch(Matli) 5 years ago
Gul faraz : this is very good web site where all those channels are avaiable which are not on other sites.Realy good. I want to do i..... 5 years ago
shahid bashir : Mein aap sab kay liye dua'go hon. 5 years ago
mansoor ahmad : very good streming 5 years ago
Dr.Hassan : WISH YOU HAPPY HEALTHY LIFE To: atif(karachi) 5 years ago
ishtiaque ahmed : best channel humsa live tv To: umair ahmed(k.g.muhammad) 5 years ago
Rizwan : Best Streaming Of Live Channels. Good Work Site Admin 5 years ago
برتری کا خبط
[ Editor ] 08-01-2013
Total Views:1153
آج کی دنیا میں درمیانہ طبقہ ہر معاشرہ کی ریڑھ کی ہڈی مانا جاتا ہے اور ہر قوم کے درمیانہ طبقہ کی کچھ منفرد خصوصیات ہوتی ہیں۔ ہمارا درمیانہ طبقہ بھی بعض خصوصیات کے اعتبار سے دنیا بھر میں نمایاں ہے، جن میں کچھ مزاحیہ اور باقی المناک کے زُمرہ میں آتی ہیں۔

فخر ہمارے درمیانے طبقے کا بنیادی رنگ ہے جس کے لیے ہم کارکردگی کا ہونا ضروری نہیں سمجھتے لہٰذا بعض اوقات ہم اس پر بھی دنیا سے داد وصول کرنا چاہتے ہیں کہ ہمارے ہاں چار موسم آتے ہیں، ایک جوشیلے نوجوان نے تو مجھے میری منفی سوچ پر شرمندہ کرتے ہوئے یہ قابل فخر بات بتائی کہ ہمارے وطن میں پہاڑ ہیں اور بارش بھی ہوتی ہے، جس سے ہرطرف اُڑتی ہوئی گرد بیٹھ جاتی ہے۔

یہ معصومیت اس تحریک کا ثمر ہے جس کا دعویٰ ہے کہ اسلام سے پہلے دنیا میں تاریکی ہی تاریکی تھی۔

فخر اور نرگسیت کے لیے کم علمی ایک ضروری شرط ہے، یوں کہا جاسکتا ہے کہ عالم کے لیے انکسار اتنا ہی فطری ہے جتنا بچے کے لیے فخر۔

ہماری نسلوں کو بے علم رکھنے کے لیے صدیوں سے ایک تحریک جاری ہے۔ برصغیر ہند میں جب مسلم بادشاہ اور ان کے رؤسا حکمران تھے تو ان کے غلبہ و اقتدار کو قائم رکھنے کے لیے ضروری تھا کہ ایک ہجوم ان کی نگرانی کرے، ان کے لیے سینہ تان کر میدان میں اُترے، ان کی تلوار بنا رہے۔ ایسا جاں نثار ہجوم ہندو رعایا میں سے بھرتی کرنا ممکن نہ تھا اور صرف مسلم عوام ہی ان کے اقتدار کے محافظ ہوسکتے تھے لہٰذا انہیں طرح طرح کا فخر سکھایا گیا۔

مسلمان ہونے کا فخر، بہادری کا فخر، گردنیں کاٹنے کی فضیلت اور وافر قوتِ مردمی کا فخر۔ چنانچہ ہمارے تاریخی ادب میں اس طرح کے جملے کثرت سے ملتے ہیں؛ کشتوں کے پشتے لگادیے؛ کفار کو گاجر مولی کی طرح کاٹ ڈالا؛ شہر کی گلیاں بت پرستوں کی لاشوں سے بھر گئیں؛ اتنی بیویوں کا حق زوجیت عمدگی سے ادا کیا۔

دین کے فخر میں بھی صرف نعرے لگانے اور جذباتی ہونے کو فضیلت دی گئی، دین کے لیے صرف قرآن پڑھ لینے کو علم و فضل کی بنیاد قرار دے دیا گیا، چنانچہ مسلم حکمرانی کے آٹھ سو برس میں برصغیر میں عوام کی تعلیم کا کوئی نظام نہ بن سکا۔

علم کیا ہے؟ کن معاملات کا علم ضروری ہے؟ کیا زراعت، تجارت، حرفت، سماجی زندگی یعنی انسانوں کے پُرامن تعلقات، صحت عامہ اور ثقافت و تفریح، ایسے بیسیوں معاملات پر غوروفکر کی ضرورت ہے یا نہیں؟ اس پر مسلم ادوار میں نہ کبھی توجہ دی گئی، نہ کوئی پیش رفت ہوسکی۔

چنانچہ برصغیر جو اسلام کے ظہور سے پہلے علم ہندسہ، ریاضی، فسلفہ ویدانت، علم موسیقی اور فن سنگ تراشی کے لیے مشہور تھا، ہمارے مسلم بادشاہوں کے دور میں کسی بھی میدان میں آگے نہیں بڑھا۔

جنوبی ہند اور بنگال میں دستکاری کی جو روایت ہندوستان کا فخر بیان کی جاتی ہے اس میں مسلمانوں کی دلچسپی صرف ٹیکس وصول کرنے تک محدود تھی یا تجارت کے لیے۔ ہم بڑے فخر سے کہتے ہیں کہ ہم نے ہندوستان میں عدل قائم کیا۔ لیکن سچ یہ ہے کہ اچھوت اچھوت رہے اور ستی کی رسم جاری رہی۔

جب انگریزوں نے مسلمان بادشاہوں کا اقتدار ختم کیا تو ہمارے دینی رہنماؤں نے اسے اسلام کا المیہ قرار دے کر مسلم عوام کو جدید علم و فکر سے ٹکرادیا۔ وہی خود پسندی اور تہذیبی نرگسیت جس نے صدیوں تک عام مسلمانوں کو عام ہندوؤں سے دور رکھا تھا، اب فرنگیوں کے کفری علوم سے دور رکھنے کے لیے ہتھیار بنائی گئی، جن لوگوں نے علومِ نو کی ضرورت پر زور دیا، کافر کہلائے اور اب تک کافر ہی کہلارہے ہیں۔

تحریک پاکستان کے رہنماؤں کا نظریہ جو بھی تھا، لیکن یہ واضح ہے کہ ہمارے رؤسا اور علمائے دین اس مشن پر متفق تھے کہ مسلم عوام کو علم و انکسار سے دور اور فخر پر قائم رکھا جائے۔ اس کے لیے دین اسلام کو ہتھیار بنانا فطری بھی تھا اور آسان بھی۔

پچھلے ساٹھ برس سے مسلسل بڑھتا ہوا دینی اُبھار اور مسلسل گہری ہوتی ہوئی خود پسندی ایک دوسرے کا حصہ ہیں۔ ساری دنیا سے نفرت کرنے اور ٹکرانے کے لیے ایسی ہی خود پسندی ہٹلر نے جرمن قوم میں اُبھاری تھی اور جاپانی جرنیلوں نے جاپانیوں میں پیدا کی تھی۔

ان اقوام کی ایجادی اور تخلیقی صلاحیتوں کا اعتراف گرچہ ساری دنیا کو تھا اور ان دونوں ملکوں کے جرنیلوں اور رہنماؤں کا کردار ایسا مشکوک یا متنازع نہ تھا جیسا کہ ہمارے ہاں ہے۔ پھر بھی ان طاقتور قوموں کا جو انجام ہوا سب کے سامنے ہے۔

نجانے ہمارے فوجی لیڈروں، دینی عالموں اور وڈیروں نے مل کر ہماری نسلوں کو اسلامی فخر کے ذریعے جہالت کے اندھیرے میں کیوں دھکیلا ہے؟ ممکن ہے یہ سب نیک نیتی سے محض کم علمی کی وجہ سے کیا گیا ہو؛ لیکن جب اس کے نتیجہ میں خود کش بمبار اور طالبان پیدا ہوتے ہیں جو اپنی ہی قوم کی انتڑیاں اُدھیڑے ڈال رہے ہیں تو صاف نظر آتا ہے کہ دنیا سے نفرت اور علیحدگی کے جارحانہ رویوں کا اگلا فطری نتیجہ وہ تصادم ہے جس کا پھل بربادی اور انتشار کے سوا کچھ نہیں؛ ان خوفناک حالات میں اسی صدیوں پرانے طرزفکر پر ڈٹے رہنے کا سبب کچھ اور ہی نظر آتا ہے۔

دنیا بھر میں ایک بھی مسلم ملک ایسا نہیں جس نے ہماری اسلامی یا تصادمی سیاست کی حمایت کی ہو۔ دوسری طرف امریکا، یورپ، روس اور ہندوستان کی طرف سے متحدہ کارروائی کی باتیں سننے میں آرہی ہیں، جس پر چین کا ردّعمل غالباً خاموشی کے سوا کچھ نہ ہوگا۔

کہیں ایسا تو نہیں کہ ہمارے کچھ حلقے کسی کے اشارے پر ہماری افواج اور عوام کو ایک ناقابل بیان تباہی کے لیے تیار کر رہے ہیں؟

ڈان نیوز

About the Author: Editor
Visit 171 Other Articles by Editor >>
Comments
Add Comments
Name
Email *
Comment
Security Code *


 
مزید مضامین
مجلسِ قلندرانِ اقبال نے یو اے ای کا قومی دن بڑے جوش و خروش سے منایا ابوظبی(طارق حسین بٹ ) یو اے ای کے قومی دن کے حوالے سے مجلسِ قلندرانِ اقبال نے مقامی ہوٹل میں ایک مشاعرے کا اہتمام کیا۔ اس تقریب کے مہمانِ خصوصی سفیرِ پاکستان جمیل احمد خان تھے اور اس تقریب کی صدارت یو .... مزید تفصیل
سعودی عرب کا قدیم ان دیکھا فن منظرِ عام پر امریکہ کے شہر واشگنٹن میں جاری ایک نمائش میں سعودی فن اور قابلیت کی ایک ان دیکھی شکل ظاہر ہوئی ہے جو خطے کی تہذیب اور تاریخی حیثیت میں انقلابی تبدیلی لائی ہے۔ چار سو برسوں سے ایک عام تاثر کے مطابق .... مزید تفصیل
فرعون رعمیسس سوئم کا سر قلم کیا گیا تھا ماہرین نے ایک نئے فورینزک جائزے کے بعد بتایا ہے کہ مصر کے فرعون رعمیسس سوئم کا سازشیوں نے سر قلم کر دیا تھا۔ فرعون کی لاش کے پہلے سی ٹی سکین سے پتا چلا ہے کہ ان کی گردن پر گہرا زخم ہے جو جان لیوا ہو .... مزید تفصیل